How to create annotated biblography in Mendeley

Well for a researcher it is very handy to have notes with biblography . Yes you can highlight the paper but for creating a notes with link to biblographic reference is very handy when you have to describe your readings to your supervisor. 

this save : http://guides.emich.edu/content.php?pid=330314&sid=2716437

Add these biblography in View-Styles-MoreSTyles and create notes, once you copy the biblography the notes will be copied as well

Also important read : http://blog.mendeley.com/tipstricks/7-ways-to-add-documents-to-mendeley/

 

Free Online Course Info

Free online courses in journalism are available from several real colleges and universities as non-credit courses. While some schools may require registration to access a course, most schools don’t have that requirement. Students can see PDF files of course lectures and materials, but may need to download a media player, such as Flash, to access videos.

Massachusetts Institute Of Technology

Continue reading

Bottom line-up Front style of writing

From Martin Krieger: BLUF (Bottom Line Up Front)

“I wrote this for our students. Perhaps it will be more widely useful. MK
In conversations with my colleagues, I realized that many of our students do not realize that most of their professional writing is for a busy audience: bosses, clients, community members, other scholars, etc. They have lots to read and do. Or, as a lawyer friend told me: Don’t assume the judge will read past the first page of the brief.
So: BLUF:  Bottom Line Up Front! Professor Juliet Musso calls this pyramidal writing. We have written articles about this sort of writing,  but the essence is:
In your first paragraph, give away your main point. Don’t promise, don’t motivate (yet), don’t tell me what you are going to do. Just tell me what you are sure you want me to know or do.
Often, you discover this main point while drafting your memo or essay or article. Then put it UP FRONT. I discover the crucial sentence or paragraph in the Conclusion or somewhere about 2/3 into the piece. BLUF!
This means you have to draft and redraft. It also helps to Proofread and Spellcheck.

readmore here:

https://sites.google.com/site/writingmatterssite/Home/being-direct-1-bottom-line-up-front

This is dedicated to Mother (Ami Jaan), I read it and every line touch my heart

 


 
میرے   بچو 
Mere Bachoo 
میرے بچو ،گر تم مجھ کو بڑھاپے کے حال میں دیکھو
اُکھڑی اُکھڑی چال میں دیکھو
مشکل ماہ و سال میں دیکھو
صبر کا دامن تھامے رکھنا
کڑوا ہے یہ گھونٹ پہ چکھنا
’’اُف ‘‘ نہ کہنا،غصے کا اظہار نہ کرنا
میرے دل پر وار نہ کرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
Mere Bacho, Agar Tum Mujhko Budhape Ke Haal Me  Dekho
Ukhdi Ukhdi Chaal Me Dekho
Mushkil Maah Wo Saal Me Dekho
Sabr Ka Daman Thaame Rakhna
Karwa Hai Yeh, ghoont Pay Chakna
Uff Ne Karna Gusse Ka Izhaar Na karna
Mere Dil Pe Waar Naa Karna
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاتھ مرے گر کمزوری سے کا نپ اٹھیں
اور کھانا،مجھ پر گر جائے تو
مجھ کو نفرت سے مت تکنا،لہجے کو بیزار نہ کرنا
بھول نہ جانا ان ہاتھوں سے تم نے کھانا کھانا سیکھا
جب تم کھانا میرے کپڑوں اور ہاتھوں پر مل دیتے تھے
میں تمہارا بوسہ لے کر ہنس دیتی تھی
کپڑوں کی تبدیلی میں گر دیر لگا دوں یا تھک جاؤں
مجھ کو سُست اور کاہل کہہ کر ، اور مجھے بیمار نہ کرنا
بھول نہ جانا کتنے شوق سے تم کو رنگ برنگے کپڑے پہناتی تھی
اک اک دن میں دس دس بار بدلواتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Hath Mere Agar Kamzoori Se Kanp Uthe
Aur Khana Mujh Se Gir Jaye Toh
Mujhko Nafrat Se Matt Takna
Lehje Ko Bezaar Naa Karna
Bhool Naa Jana In Hathoun Se Tumne Khana Khaana Seekha
Jab Tum Khana Mere Kapdoun
Aur Hathoun Pe Mull Dete The
Mein Tumhara Bosa Lekar Hass Deti Thi
Kapdoun Ki Tabdeeli Me
Agar Dier Lagadoun ya Thak Jaoun
Mujhko Sust Aur Kaahil Keh kar
Aur Mujhe Beemar Naa Karna
Bhool Naa Jana Kitne Shouq Se Tum ko
Rang Barangi Kapde Pehanati Thi
EK Ek Din Me Dus Dus Bar Badlawati Thi
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے یہ کمزور قدم گر جلدی جلدی اُٹھ نہ پائیں
میرا ہاتھ پکڑ لینا تم ،تیز اپنی رفتار نہ کرنا
بھول نہ جانا،میری انگلی تھام کے تم نے پاؤں پاؤں چلنا سیکھا
میری باہوں کے حلقے میں گرنا اور سنبھلنا سیکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Mere Yeh Kamzoor Qadam
Agar Jaldi Jaldi Uth Naa Paayein
Mera Hath Pakad Lena Tum
Tezz Apni Raftaar Naa Karna
Bhool Naa Janaa Meri Ungli Thaam Ke
Tumne Paaoun Paaoun Chalna Seekha
Meri Baahoun Ke Halqe Me
Girna Aur Sambhalna Seekha
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب میں باتیں کرتے کرتے،رُک جاؤں ،خود کو دھراوں
ٹوٹا ربط پکڑ نہ پاؤں،یادِ ماضی میں کھو جاؤں
آسانی سے سمجھ نہ پاؤں،مجھ کو نرمی سے سمجھانا
مجھ سے مت بے کار اُلجھنا،مجھے سمجھنا
اکتاکر، گھبراکر مجھ کو ڈانٹ نہ دینا
دل کے کانچ کو پتھر مار کے کرچی کرچی بانٹ نہ دینا
بھول نہ جانا جب تم ننھے منے سے تھے
ایک کہانی سو سو بار سنا کرتے تھے
اور میں کتنی چاہت سے ہر بار سنا یاکرتی تھی
جو کچھ دھرانے کو کہتے،میں دھرایا کرتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Jab Mein Baatein Karte Karte Rukk Jaoun
Khud Ko Dohraoun
Toota Rabt Pakad Naa Paaoun
Yaad-E-Maazi Me Kho jaoun
Aasani Se Samajh Naa Paaoun
Mujh Ko Narmi Se Samjhana
Mujh Se Bekaar Matt Ulajhna
Mujhe Samjhana
Uktakar Ghabrakar Mujhko Daant Naa Dena
Dil Ke Kaanch Ko Pather Maar ke
Kurchi Kurchi Baant Naa Dena
Bhool Naa Jana Jab Tum Nannhe Munne Se The
Ek Kahani Sau Sau Baar Suna karte The
Aur Mein Kitni Chahat Se Har Baar Sunaya Karti
Thi
Jo Kuch Dohrane ko Kehte Mein Dohraya karti Thi
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اگر نہانے میں مجھ سے سُستی ہو جائے
مجھ کو شرمندہ مت کرنا،یہ نہ کہنا آپ سے کتنی بُو آتی ہے
بھول نہ جانا جب تم ننھے منے سے تھے اور نہانے سے چڑتے تھے
تم کو نہلانے کی خاطر
چڑیا گھر لے جانے میں تم سے وعدہ کرتی تھی
کیسے کیسے حیلوں سے تم کو آمادہ کرتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Agar Nahane Me Mujh Se Susti Hojaye
Mujhko Sharminda Matt Karna
Ye Naa Kehna Aap Se Kitni Boo Aati Hai
Bhool Naa Janaa Jab Tum Nannhe Munne The
Aur Nahane Se Chiddte The
Tumko Nehlane Ki Qatir
Chidya Ghar Lejaane Mein Wadaa Karti Thi
Kaise Kaise Heiloun Se Tumko Amadah Karti Thi
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں جلدی سمجھ نہ پاؤں،وقت سے کچھ پیچھے رہ جاؤں
مجھ پر حیرت سے مت ہنسنا،اور کوئی فقرہ نہ کسنا
مجھ کو کچھ مہلت دے دینا شائد میں کچھ سیکھ سکوں
بھول نہ جانا
میں نے برسوں محنت کر کے تم کو کیا کیا سکھلایا تھا
کھانا پینا،چلنا پھرنا،ملنا جلنا،لکھنا پڑھنا
اور آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے اس دنیا کی ،آگے بڑھنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Agar Mein Jaldi Samajh Naa Paaoun
Waqt Se Kuch Peeche Reh Jaoun
Mujh Par Hairat Se Matt Hasna
Aur Koi Faqra Naa Kasna
Mujhko Kuch Mohlat De Dena
Shayed Mein Kuch Seekh Sakoun
Bhool Naa Jana Barsoun Meine
Mehnat Karke Tum Ko Kya Kya Sekhlaya
Khana-Peena-Chalna-Phirna
Milna Julna – Likhna Padhna
Aur Aankhoun Me Aankhein
Daalke Iss Duniya ki Aage Badhna
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری کھانسی سُن کر گر تم سوتے سوتے جاگ اٹھوتو
مجھ کو تم جھڑکی نہ دینا
یہ نہ کہنا،جانے دن بھر کیا کیا کھاتی رہتی ہیں
اور راتوں کو کُھوں کھوں کر کے شور مچاتی رہتی ہیں
بھول نہ جانامیں نے کتنی لمبی راتیں
تم کو اپنی گود میں لے کر ٹہل ٹہل کر کاٹی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Meri Khaansi Sunkar Agar Tum Sote Sote Jaag
Utho
Mujhko Tum Jhidki Naa Dena
Ye Naa Kehna Jaane Din bhar Kya Kya Khati Rehti Hain
Aur Raatoun Ko Khoun Khoun Karke Shor Machati Rehti Hai
Bhool Naa Jana Mein Kitni Lambi Raatein
Tumko Apni Goud Me Lekar Tahel Tahel Kar Kaati Hain
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں کھانا نہ کھاؤں تو تم مجھ کو مجبور نہ کرنا
جس شے کو جی چاہے میرا اس کو مجھ سے دور نہ کرنا
پرہیزوں کی آڑ میں ہر پل میرا دل رنجور نہ کرنا
کس کا فرض ہے مجھ کو رکھنا
اس بارے میں اک دوجے سے بحث نہ کرنا
آپس میں بے کار نہ لڑنا
جس کو کچھ مجبوری ہو اس بھائی پر الزام نہ دھرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Agar Mein Khana Naa Khaoun
Toh Tum Mujhko Majboor Naa Karna
Jis Shaiye Ko Jee Chahe Mera
Ussko mujh Se Durr Naa Karna
Parhaizoun Ki Aad Me Har Pall
Mera Dil Ranjor Naa karna
Kiska Farz Hai Mujhko Rakhna
Iss Baare Me Ek Duje Se Bahess Naa karna
Aapas Me Bekaar Naa Ladna
Jisko Kuch Majboori Ho Uss Bhai Par Ilzaam naa Dena
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں اک دن کہہ دوں ؔ ، اب جینے کی چاہ نہیں ہے
یونہی بوجھ بنی بیٹھی ہوں ،کوئی بھی ہمراہ نہیں ہے
تم مجھ پر ناراض نہ ہونا
جیون کا یہ راز سمجھنا
برسوں جیتے جیتے آخر ایسے دن بھی آ جاتے ہیں
جب جیون کی روح تو رخصت ہو جاتی ہے
سانس کی ڈوری رہ جاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Gar Mein Kehdoun Ek Din
Ab mujhme Jeene Ki Chah Nahi
Yunhi Bojh Bani Baithi Hoon
Koi Bhi Humrah Nahi Hai
Tum Mujh Par Naraz Naa Hona
Jeewan Ka Ye Raaz Samajhna
Barsoun jeete Jeete Aaqir
Aise bhi Din Aajate Hain
Jab Jeewan Ki Ruh Toh Ruqsat Hojati Hai
Saans Ki Doori Reh Jaati Hai
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شائد کل تم جان سکو گے ،اس ماں کو پہچان سکو گے
گر چہ جیون کی اس دوڑ میں ،میں نے سب کچھ ہار دیا ہے
لیکن ،میرے دامن میں جو کچھ تھا تم پر وار دیا ہے
تم کو سچا پیار دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Shayed kal Tum Jaan Sakoge
Iss Maa ko Pechan Sakoge
Agarche Jeewan Ki Iss Doud Me
Meine Sab Kuch Haar Diya Hai
Laikin Mere Daman Me Jo Kuch Tha
Tum Par Waar Diya Hai
Tum Ko Saccha Pyaar Diya Hai
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب میں مر جاؤں تو مجھ کو
میرے پیارے رب کی جانب چپکے سے سرکا دینا
ا ور ،دعا کی خاطر ہاتھ اُٹھا دینا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Jab Mein Marr Jaoun Toh
Mujh Ko Mere Pyare Rabb
Ki Janib Chupke Se Sarka dena
Aur Dua Ki Qatir Hath Utha Dena
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے پیارے رب سے کہنا،رحم ہماری ماں پر کر دے
جیسے اس نے بچپن میں ہم کمزوروں پر رحم کیا تھا
بھول نہ جانا،میرے بچو
جب تک مجھ میں جان تھی باقی
خون رگوں میں دوڑ رہا تھا
دل سینے میں دھڑک رہا تھا
خیر تمہاری مانگی میں نے
میرا ہر اک سانس دعا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Mere Pyare Rabb Se Kehna
Raham Humari Maa Pe Karde
Jaise Issne Bachpan Me Hum
Kamzooroun Par Rahaam Kiya Tha
Bhool Naa jana Mere Bachoo
Jab Tak mujh Me Jaan baaqi Thi
Khoon Ragoun Me Doud Raha Tha
Dil Seene Me Dhadak Raha Tha
Qair Tumhari Maangi Mein Ne
Mera har Ek Saans DUA Tha
Regards:
Aini
 
 
__._,_.___

 

 

A Silent Evening of 2041

It was a quite evening , i took the sip of tea and placed the cup on table  .   Opened the laptop with shaking hands and looked around. 
 
Although I was alone with the silence, but old memories, hopes and broken plans do not leave me alone.  

This time i gathered my full energy and tried to stand from the wheel chair , a small shock strucked near my heart and a notice a beep in pacemaker . I finally stood up and went into gallery to get some fresh air . Like usual it was also silent outside , people around me were in deep sleep and i was the only stranded soul at midnight.

I asked my self, Zeeshan you used to sleep quit fast and long ! What makes you stranded at 2 AM ?  
My innerself  replied :It is because “In young age , days are short but years are long  , whereas in Old age, days are long but years are short “ .

I gaze on the bundle of books which i have been planning to read for last few decades but now even with enough time i did not have strength  to read.  

I came back to my laptop , opened the notepad and started to write Todos to improve in hereafter. While brainstorming i looked the computer date it was 14th Sept 2041 . I looked on the roof and tried to recall my memories , a silent breeze of sigh came out  and took me thirty years back, when I was writing the same Todos.

Todos were the same , the only difference is that i had a real heart instead of pacemaker ,was busy in family and had energy to stand quickly and firmly .